Noor Library   

Click here to edit subtitle

CONNECT WITH US ON
Read Online

 
 
Book Review


Reviewer: Sheikh Nadeem Ahmed

Since the inception of human life in the world, God Almighty revealed Messengers for the salvation and amelioration of Human beings. Their teachings were meant to lead human beings to the righteous path and guide them for attaining better life. With the emergence of Holy Prophet and revelations of the Quran the religion of Islam ascended to its zenith. He too conveyed the message of God just like His predecessors and vowed about ensuring the welfare of Human beings. The Quran emphatically asserts that those who adhere to the teachings of God and Messengers earn enviable place here and here-after and those who fail to capitalize upon, are destined to be ruined. Today, the Ummah of the Holy Prophet (PBUH) has been passing through a critical time. The perpetual decline in the Muslim world is attributed to social, economic injustices, despotism and above all deviation from the established principles of the Quran and Hadith. Tahir-ul-Qadri has contemplated over the appalling conditions of the Muslim Ummah and voiced about bringing a revolution in the light of the Quran and Hadith. He thinks that the only remedy for all prevalent ills lies in bringing revolution on the basis of the Quran and Hadith. In order to animate the sordid sculpture of the Muslims, this book has been brought out with meaningful connotations. The book has been written in Urdu language. It comprises two volumes. At the end of each volume, the author has provided a primary source from his personal diary in which he wrote about the idea of Qurani Falsaf-e-Inaqilab (revolution). The first volume is divided into nine chapters. The first chapter of the first volume begins with the conceptual frame of revolution. He has presented Quranic perspective over philosophy of revolution comprehensively. He quotes a Quranic verse expressively ‘Issi Trha Hum Na Tumhary Andar Sa Apna Rasool Bheja Jo Tum Per Humari Aayatain Talawat Frmata Ha aur Tumhain Pak Saaf Karta aur Tumhain Kitab Ki Taleem Data Ha or Hikmat-o-Danai Sikhata Ha aur Tumhain vo Sikhata ha Jo Tum Na Janty Thay (Translation) “Just as We have sent among you a messenger from yourselves reciting to you Our verses and purifying you and teaching you the Book and wisdom and teaching you that which you did not know”. Those who remained submissive and followed Messengers were successful and those who flouted their teachings were reduced to nothing. He writes in a prolific manner and impressively justifies the theoretical construction of Quranic Falsafa-e- Inqilab. The author convincingly proceeds to describe the historical decline of Ummah in the second chapter. The author has classified the struggle of the Holy Prophet in three phases. i) Period before Revolution, ii) Period of Revolution, iii) Period after Revolution. He contends that when the Muslims turned away from the real teachings of the Holy Prophet and the Quran, they fell to deplorable plight. The socio-economic and political chaos crept in. The impact was highly catastrophic in nature. Third chapter relates to ‘Changes in Political Thought’. Here concepts like elections, representation, political parties and political structure have been illuminated. The fourth chapter ‘Changes in Economic Thought’ covers historical underpinnings of economic matters, fiscal policies and monetary plans developed by the Muslim rulers. It encapsulates eleven principles of distributing wealth in the Muslim society. Thus develops a very interesting analysis of economic discourse. He has narrated Changes in ‘Jurisprudence & Legal Thought’ in the fifth chapter, here the author cogitates over various aspects of Fiqqah and also advances discussion on the concept of Ijtihad and its practicability. The ‘Changes in Social Thought’ has been highlighted in the sixth chapter in which the author broods over ethical bias and enlists prejudices on the basis of caste system in the society. Here he proposes remedies like restructuring family, Mosques, seminaries, and state etc. The next chapter pertains to ‘Changes in Cultural Thought’, it includes definitions, classification and the culture of Muslim Civilization. He describes ideological, cultural, emotional attacks on Muslim culture and goes quite apprehensive about the future of Muslim culture in the world. The chapter eight ‘Changes in Religious Thought’ presents a very informative analysis, it incorporates that Fitna’s (unrest or rebellion, especially against a rightful ruler) has impacted the religious thought and its development. It also discusses challenges confronting Muslim Ummah in the contemporary world. Chapter Nine deals with ‘Changes in Educational Thought’, here he begins with the classification of education. He classifies education into two categories such as religious education and non religious education. He elaborates major reasons for the downfall of Muslims in the realm of education. He lays stress on reforming behavior of individuals. He is of the opinion that goodness in human actions purifies human soul and brings the blessings of God Almighty. They move in the state of Taqqwa (piety) and accumulate virtues. The author realizes that by following the Quran and Sunnah, human beings may attain the world of Falah (betterment). The essence of Islamic teachings is to reform human beings and lead them to the righteous path. The second volume covers six chapters. In this volume the author adopts realistic approach to demonstrate the philosophy of revolution. He opinionates that Islam is a religion for all times. The author has embellished his arguments justifiably. READ MORE>>>
 

حرف آغاز


گزشتہ کئی سالوں سے دہشت گردی کی اذیت ناک لہر نے امتِ مسلمہ کو بالعموم اور پاکستان کو بالخصوص بدنام کر رکھا ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ جہاں مسلمان مجموعی طور پر دہشت گردی کی مذمت اور مخالفت کرتے ہیں اور اسلام کے ساتھ اس کا دور کا رشتہ بھی قبول کرنے کو تیار نہیں ہیں، وہاں کچھ لوگ اس کی خاموش حمایت بھی کرتے دکھائی دیتے ہیں۔ یہ لوگ اس کی کھلم کھلا مذمت و مخالفت کی بجائے موضوع کو خلط مبحث کے ذریعے الجھا دیتے ہیں۔ دہشت گردی کے قومی، علاقائی اور بین الاقوامی اسباب میں عالمی سطح پر بعض معاملات میں مسلمانوں کے ساتھ نا اِنصافی، بعض خطوں میںبالادست طاقتوں کے دُہرے معیارات اور کئی ممالک میں شدت پسندی کے خاتمے کے لئے طویل المیعاد جارحیت جیسے مسائل بنیادی نوعیت کے ہیں۔

اِسی طرح دہشت گردوں کی طرف سے مسلح فساد انگیزی، انسانی قتل و غارت گری، دنیا بھر کی پُرامن انسانی آبادیوں پر خودکش حملے، مساجد، مزارات، تعلیمی اداروں، بازاروں، سرکاری عمارتوں، ٹریڈ سنٹروں، دفاعی تربیتی مرکزوں، سفارت خانوں، گاڑیوں اور دیگر پبلک مقامات پر بم باری جیسے اِنسان دشمن، سفاکانہ اور بہیمانہ اقدامات روز مرہ کا معمول بن چکے ہیں۔ یہ لوگ آئے دن سینکڑوں ہزاروں جانوں کے بے دریغ قتل اور انسانی بربادی کے عمل کو جہاد سے منسوب کر دیتے ہیں اور یوں پورے اسلامی تصورِ جہاد کو خلط ملط کرتے رہتے ہیں۔ اس سے نوجوان نسل کے ذہن بالخصوص اور کئی سادہ لوح مسلمانوں کے ذہن بالعموم پراگندہ اور تشکیک و ابہام کا شکار ہو رہے ہیں کیونکہ ایسے اقدامات کرنے والے مسلمانوں میں سے ہی اٹھتے ہیں، اسلامی عبادات و مناسک کی انجام دہی بھی کرتے ہیں اور ان کی ظاہری وضع قطع بھی شریعت کے مطابق ہوتی ہے۔ لہٰذا عام مسلمان ہی نہیں بلکہ بیشتر علماء اور دانش وَر بھی ایک مخمصے میں مبتلا ہیں کہ ایسے افراد اور گروہوں کے اس طرح کے طرزِ عمل، طریقہ کار اور 

 اقدامات کے بارے میں شرعی اَحکامات کیا ہیں؟

علاوہ ازیں مغربی دنیا میں میڈیا عالمِ اسلام کے حوالے سے صرف شدت پسندی اور دہشت گردی کے اقدامات و واقعات کو ہی highlight کرتا ہے اور اسلام کے مثبت پہلو، حقیقی پرامن تعلیمات اور اِنسان دوست فلسفہ و طرزِ عمل کو قطعی طور پر اُجاگر نہیں کرتا۔ حتی کہ خود عالمِ اسلام میں دہشت گردی کے خلاف پائی جانے والی نفرت، مذمت اور مخالفت کا سرے سے تذکرہ بھی نہیں کرتا۔ جس کے نتیجے میں منفی طور پر اسلام اور انتہاء پسندی و دہشت گردی کو باہم بریکٹ کر دیا گیا ہے اور صورت حال یہ ہے کہ اسلام کا نام سنتے ہی مغربی ذہنوں میں دہشت گردی کی تصویر ابھرنے لگتی ہے۔ اس سے نہ صرف مغرب میں پرورش پانے والی مسلم نوجوان نسل انتہائی پریشان، متذبذب اور اضطراب انگیز ہیجان کا شکار ہے بلکہ پورے عالم اسلام کے نوجوان اعتقادی، فکری اور عملی لحاظ سے تزلزل اور ذہنی انتشار میں مبتلا ہو رہے ہیں۔

ان تمام حالات کے نتیجے میں دو طرح کے ردعمل اور نقصانات پیدا ہو رہے ہیں۔ ایک نقصان اسلام اور اُمتِ مسلمہ کا اور دوسرا نقصان عالمِ مغرب اور بالخصوص پوری انسانیت کا۔ اسلام اور امت مسلمہ کا نقصان تو یہ ہے کہ عصرِ حاضر کی نوجوان نسل جو اسلام کی حقیقی تعلیمات سے شناسا نہیں وہ میڈیا سے متاثر ہو کر انتہا پسندی اور دہشت گردی کو (معاذ اللہ) دین و مذہب کے اثرات یا دینی اور مذہبی لوگوں کے رویوں کی طرف منسوب کر دیتے ہیں اور یوں اپنے لئے لادینیت یا دیں گریزی کی راہ میں بہتری سمجھنے لگتے ہیں۔ یہ غلط طرزِ فکر انہیں رفتہ رفتہ بے دین بنا رہا ہے جس کا نقصان پوری اُمتِ مسلمہ کی اگلی نسلوں کو ہوگا۔ اس کے برعکس دوسرا نقصان، عالمِ مغرب اور بالخصوص پوری انسانیت کے لئے یہ ہے کہ مذکورہ بالا پالیسیوں اور منفی سرگرمیوں کا کئی مسلم نوجوانوں پر منفی ردّعمل ہو رہا ہے۔ وہ اِسے عالمِ مغرب کے بعض مؤثر حلقوں کی اسلام کے خلاف منظم سازش اور عداوت قرار دے رہے ہیں، جس کے نتیجے میں وہ ردّعمل کے طور پر راہِ اعتدال (moderation) چھوڑ کر نفرت و انتقام کا جذبہ لے کر انتہاء پسند (extremist) اور پھر شدت پسند اور پھر بالآخر دہشت گرد بن رہے ہیں یا بنائے جا رہے ہیں۔ گویا مغربی پالیسیوں کی وجہ سے دہشت گردوں کو مزید نئی کھیپ اور نئی افرادی قوت میسر آتی جا رہی ہے اور یہ سلسلہ لامتناہی ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔ سو دونوں صورتوں میں نقصان عالم انسانیت کا بھی ہے اور عالم اسلام کا بھی۔ 

 مزید پڑھیئےِِ>>>

 
Noor Library Korangi